سمارٹ لاک ڈاؤن کی حکمت عملی ابھی تک موثر ثابت ہوئی ہے، وائرس کے پھیلاؤ کو کنٹرول کرنے میں مدد ملی- مشیر اطلاعات اجمل وزیر

پشاور:مشیر اطلاعات اجمل وزیر میڈیا بریفنگ، ان کا کہنا تھا کہ وفاقی حکومت بجٹ کی پارلیمنٹ سے منظوری پر مبارکباد کی مستحق ہے،مشکل وقت میں ایسا بجٹ بنانا جس میں صحت کی بہتری اور غریبوں کی مدد کے احساس پروگرام کو توجہ دی گئی ہے،قابل تحسین ہے.

اجمل وزیر نے کہا کہ بجٹ منظور نہ ہونے دینے کے دعوؤں میں حکومت بری طرح ناکام ہوئی، اللّہ کا کرم ہے اس مشکل وقت میں ملک کا وزیراعظم عمران خان ہے، اگر اپوزیشن کی کوئی جماعت اس وقت حکومت کررہی ہوتی تو اس وقت ملک کا کیا حال ہوتا، عمران خان احساس پروگرام کے زریعے غریب عوام کی مدد کررہے ہیں.

اجمل وزیرنے مزید کہا کہ این سی او سی کا کردار اس وقت عمدہ ہے، پورے ملک کی صورتحال کو مانیٹر کرکے بہترین حکمت عملی ترتیب دی جاتی ہے، وزیراعظم عمران خان کی قیادت میں ملک بہتر سمت میں چل رہا ہے،وزیراعلیٰ محمود خان وزیراعظم کے وژن کے مطابق صوبے کی بہتری کے لیے کام کررہے ہیں.

اجمل وزیرنے مزید کہا کہ ہم نے خیبر پختونخوا کے بجٹ میں صحت کو خصوصی توجہ دی ہے، پہلی بار 24ارب روپے کی خطیر رقم کورونا ایمرجنسی کے لیے رکھی گئی ہے،صوبے کے ضم شدہ اضلاع کی بہتری کے لیے بجٹ میں رقم مختص ہے، صوبے میں کورونا سے صحتیابی کی شرح بہتر ہوئے ہے، گزشتہ ایک ہفتے میں یہ شرح 30فیصد سے بڑھ کر 48فیصد ہوئی ہے.

اجمل وزیر نے مزید کہا کہ کورونا روک تھام کے لیے وزیراعظم پاکستان کی ہدایت پر سمارٹ لاک ڈاؤن کی حکمت عملی پر عملدرآمد جاری ہے،صوبہ بھر کے ساتوں ڈویژن کے مختلف اضلاع میں اب تک کل 276 متاثرہ علاقوں میں سمارٹ لاک ڈاون کیا گیا،ان تمام علاقوں میں کورونا سے متاثرہ افراد کی تعداد 2895 ہے،سمارٹ لاک ڈاون کی وجہ سے 8لاکھ 8ہزار627 افراد کو گھروں تک محدود کیا گیا ہے،ان متاثرہ علاقوں میں 3ہزار141 گھروں کو آئسولیٹ کیا گیا ہے,مقررہ مدت پوری ہونے پر 58 علاقوں سے سمارٹ لاک ڈاون ہٹایا گیا ہے.

اجمل وزیر نے مزید کہا کہ وزیراعلی محمود خان کی ہدایت پر ضلعی انتظامیہ، محمکہ صحت اور محمکہ ریلیف سمارٹ لاک ڈاون والے علاقوں کی نگرانی کررہے ہیں،سمارٹ لاک ڈاؤن کی یہ حکمت عملی ابھی تک موثر ثابت ہوئی ہے، وائرس کے پھیلاؤ کو کنٹرول کرنے میں مدد ملی ہے،عوام سے یہ گزارش ہے کہ وہ حکومت کی بتائی ایس او پیز پر عملدرآمد کریں،حکومت ،ڈاکٹرز، طبی عملہ ، سیکیورٹی اداروں کے ساتھ ساتھ عوام کو بھی کورونا سدباب کے لیے اپنا کردار ادا کرنا ہے.