وزیراعظم نے کابینہ ارکان اور بیوروکریٹس پر عسکری اداروں اور افسران سے براہ راست ملاقات اور بریفنگز پر پابندی عائد کردی

ویب ڈیسک (اسلام آباد): ذرائع کے مطابق وزیراعظم نے کابینہ ارکان اور بیوروکریٹس پر عسکری اداروں اور افسران سے براہ راست ملاقات اور بریفنگز پر پابندی عائد کردی، وزیراعظم عمران خان کا کابینہ ارکان اور بیوروکریٹس کے عسکری اداروں اور افسران سے براہ راست رابطوں پر نوٹس، جی ایچ کیو، نیول ہیڈ کوارٹر اور ایئر فورس ہیڈ کوارٹر سمیت اہم اداروں کے افسران سے براہ راست رابطے اورملاقات رولز آف بزنس کے منافی قرار، وزیراعظم کو وزراء اور بیورو کریٹس کی براہ راست ملاقاتوں اور بریفنگز کی رپورٹس موصول ہو رہی تھیں، وزراء اور بیورو کریٹس کا اقدام کو 1973 کے رولز آف بزنس کے منافی ہے، براہ راست ملاقاتیں، خط و کتابت اور بریفنگ رولز آف بزنس کے سیکشن 8 اور 56 کے منافی ہے۔ کابینہ ڈویژن نے کابینہ ارکان اور بیورو کریٹس کو پابندی عائد کرنے کے احکامات ارسال کر دیئے ہیں، جی ایچ کیو، نیوی اور ایئر فورس کے اعلیٰ افسران سے ملاقات، خط و کتابت اور بریفنگ کے لیے وزارت دفاع سے رجوع کیا جائے، وزارت دفاع رولز آف بزنس کے مطابق متعلقہ وزراء اور بیورو کریٹس کی ملاقاتوں اور بریفنگ کا انعقاد کروائے گی، وفاقی وزیر دفاع اور سکریٹری دفاع ملاقاتوں، خط و کتابت اور بریفنگ سے متعلق وزیراعظم عمران خان کو پیشگی آگاہ کریں گے، وزیراعظم کی اجازت کے بعد وزارت دفاع متعلقہ وزارت کو مطلوبہ ہدایات جاری کرے گی، سابق وزیر اعظم نوازشریف پارٹی رہنماوں پر عسکری قیادت سے براہ راست ملاقاتوں پر پابندی عائد کرچکے ہیں۔