پاکستان اور افغان کسٹمز کے درمیان تعاون کے فروغ کے معاہدے پر دستخط

ویب ڈیسک (اسلام آباد): پاکستان اور افغان کسٹمز کے درمیان تعاون کے فروغ کے معاہدے پر دستخط، پاکستان کسٹمز کے سید محمد طارق ہدی، ممبر کسٹمز آپریشنز افغانستان کسٹمز خلیل اللہ صالح زاد، ڈائیریکٹر جنرل افغان کسٹمز ڈیپارٹمنٹ نے معاہدے پر دستخط کئے، تقریب میں افغانستان کی وزارت کامرس اور صنعت کے وزیر نثار احمد گھوریانی اور چئیر مین ایف بی آر محمد جاوید غنی شریک ہوئے، کسٹمز تعاون کے معاہدے پر دستخط وزیر اعظم پاکستان کی ہدایات کے نتیجے میں کئے گئے ہیں۔
معاہدے کے تحت دونوں ممالک کے کسٹمز ڈیپارٹمنٹ الیکٹرانک طریقے سے معلومات کا تبادلہ کریں گے، معاہدے کے مطابق کارگو کی کلیرنس کم سے کم وقت پر ہو سکے گی، جس کے باعث درآمدات، برآمدات اور ٹرانزٹ کارگو تجارت کو فروغ ملے گا، معاہدے کے مطابق سمگلنگ کی روک تھام کو موثر انداز سے کنٹرول کیا جا سکے گا، ڈیوٹیز اور ٹیکسز کی چوری میں کمی آئے گی، دونوں ممالک کے کسٹمز ڈیپارٹمنٹس کے درمیان تعاون کو فروغ ملے گا، معاہدے کی وجہ سے نہ صرف دونوں ممالک بلکہ پورے خطے میں تجارت کو فروغ ملے گا،
بارڈر کراسنگ پوائینٹس پر کلیرنس اور سروس ڈیلیوری کو بہتر بنایا جا سکے گا، معاہدے پر افغان کامرس وزیر نثار احمد گھوریانی نے پاکستان اور افغانستان کے کسٹمز اداروں کو اہم سنگ میل حاصل کرنے پر مبارک باد دی، انہوں نے معاہدے کو دونوں ممالک کے درمیان تجارت کے فروغ کے لئے خوش آئند قرار دیا۔
چئیرمین ایف بی آر کا کہنا تھا کہ معاہدے کی رو سے دونوں ممالک کے کسٹمز اداروں کو اشیاء اور ٹرانسپورٹ کی نقل وحرکت کا قبل از وقت پتہ چل جائے گا، معاہدے پر دستخط سے تجارت کے فروغ کا ایک نیا باب شروع ہو گا،
ڈائیریکٹر جنرل افغان کسٹمز ڈیپارٹمنٹ خلیل اللہ صالح نے کہا کہ معاہدے کے نتیجہ میں تجارتی سیکیورٹی کو بہتر کرنے میں مدد ملے گی۔ دونوں ممالک کے درمیان تجارتی تعاون کو بڑھانے کے بہت سے مواقع ہیں،تقریب میں دونوں ممالک کی بزنس کمیونٹی بھی بڑی تعداد میں موجود تھی۔ چئیرمین ایف بی آر اور ممبر کسٹمز آپریشنز نے بزنس کمیونٹی سے بات چیت میں حکومت پاکستان کی طورخم بارڈر پر کسٹمز کلیرنس کی کاوش کا ذکر کیا جس سے تجارت کو فروغ ملا ہے۔ بزنس کمیونٹی نے پاکستان کسٹمز کے اقدامات کی تعریف کی۔