امریکی صدرٹرمپ نے آخرکارجوبائیڈن کواختیارات دےدئیے

ویب ڈیسک : صدرڈونلڈ ٹرمپ نے کڑواگھونٹ پیتے ہوئے بائیڈن انتظامیہ کو بالآخر اختیارات منتقلی کی منظوری دیدی، جس کے بعد کئی ہفتوں سے امریکی صدر کی جانب سے جاری ٹال مٹول انجام کو پہنچ گئی، گزشتہ روز جنرل سروس ایڈمنسٹریشن کی سربراہ ایملی مرفی کی جانب سے لکھے گئے خط میں 9 منتخب امریکی صدر جوبائیڈن کو آگاہ کیا گیا کہ ٹرمپ انتظامیہ اقتدار کی باضابطہ منتقلی کا عمل شروع کرنے کے لیے تیار ہے، ایملی مرفی کی جانب سے لکھے گئے خط کے بعد اب بائیڈن انتطامیہ حکومت سازی کے لیے لاکھوں ڈالر حکومتی فنڈز سے استعمال کر سکے گی،

امریکی صدارتی انتخابات میں ڈیموکریٹ امیدوار جوبائیڈن کو فاتح قرار دیے جانے کے تقریباً 2 ہفتے بعد صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی شکست تسلیم کیے جانے کے حوالے سے یہ پہلا قدم ہے، جنرل ایڈمنسٹریشن کی سربراہ ایملی مرفی کے خط فیصلہ بغیر کسی دباؤ یا خوف کے قانون اور دستیاب حقائق کو مد نظر رکھتے ہوئے کیا گیا ہے، مرفی کا کہنا ہے کہ اس فیصلے کے پیچھے مجھ پر وائٹ ہاؤس کے ایگزیکٹیو حکام یا پھر جی ایس اے میں کام کرنے والوں کی جانب سے براہ راست یا بالواسطہ کسی قسم کا کوئی دباؤ نہیں تھا اور اس بات کی وضاحت ضروری ہے کہ میرے فیصلے میں تاخیر کے لیے بھی مجھے کسی کی طرف سے کوئی ہدایت نہیں دی گئی ہیں،

امریکا کے 9 منتخب صدر جو بائیڈن نے اقتدار کی پرامن منتقلی کو خوش آئند قرار دیا ہے، دوسری جانب صدر ٹرمپ کا کہنا ہے کہ قانونی جنگ جاری رہے گی، مگر انتظامیہ سے کہہ دیا ہے کہ جس چیز کی ضرورت ہے اسے انجام دیا جائے، خط صدر ٹرمپ کی شکست تسلیم کیے جانے کا پہلا قدم ہے، رپورٹ کے مطابق صدر ٹرمپ نے یہ اقدام ایسے وقت کیا ہے، جب کہ اہم ریاست مشی گن نے بھی جو بائیڈن کی فتح کی توثیق کر دی ہے، جب کہ ڈونلڈ ٹرمپ کی کوشش تھی کہ نتیجے کو روکا جائے مگر ایسا نہ ہو سکا۔