Mashriqyat

مشرقیات

ہم مملکت خداداد اسلامی جمہوریہ پاکستان کے لوگ موت سے نہیں ڈرتے، موت کے سامان کا کوئی موقع ہو تو آبیل مجھے مار کے مصداق دعوت مبارزت دینے پر خود ہی عمل نہیں کرتے، اپنے ساتھ جان پہچان کے ہر بندے کو بھی اس میدان عمل میں کودنے کی تحریک دینے میں ہمارا کوئی ثانی نہیں۔کوئی بلا آئے یا وبا ،حادثہ ہو یا اجتماعی قتل عمد کی کوئی سبیل، سب صدمے سہہ کر بھی ہم دوچار دن بعد اسے قسمت کا لکھا سمجھ کر اسی روش پر چل پڑتے ہیں جہاں قدم قدم پر کوئی خطرہ سر اٹھائے کھڑا ہو، اس لئے کوئی ہمیں خطروں کے کھلاڑ ی قرار دے تو اس میں رتی بھر شک کرنے والا کافر۔
باقی معاملات کو رہنے دیں آج صرف ہم وبائوں کے حوالے سے اپنی اجتماعی بصیرت کے شاہکار نمونوں پر بات کرتے ہیں۔ایک وقت تھا جب زیادہ آبادی کو وبا قرار دے کر اس کے سامنے حکومت اور اس کے ادارے بند باندھنے پر جت گئے تھے، تاہم ان کے مقابلے ان ہی لوگوں کی سنی گئی جو دیار مغرب سے سازشی تھیوریوں کی درآمد وبرآمد کا کام کرتے ہیں۔مجال ہے آبادی میں اضافے سے کوئی ہمیں باز رکھنے میں کامیاب ہوسکا ہو۔
پولیو کو لے لیں، دنیا بھر میں صرف ہم ہی رہ گئے جو ڈٹ کر اس بیماری کو ختم کرنے کی ہر کوشش کو ناکام بنا رہے ہیں۔معاشی ترقی کی دوڑ میںہم سے کہیں پیچھے رہ جانے والے ممالک نے بھی پولیوکا قلع قمع کر دیا ہے، اپنے ہاں اس کے مقابلے کی فضا ہزار کوششوں کے باوجود اس لئے ناکام بن جاتی ہے کہ اس قوم میں خال خال سہی اب بھی ایسے ظالموں کی کمی نہیں جو پولیو کے قطروں کو اپنی مردانگی پر ضرب لگانے کی مغربی سازش قرار دیتے ہیں۔ایسی ہی مرد میدان قسم میں شامل بیس ہزار سے زیادہ خاندانوں نے اپنے بچوں کو پولیو کی حالیہ مہم میں قطرے پلانے سے انکار کیا ہے۔یہ ہزاروں افراد اپنے بچوں کو جیتے جی مارنے کی تیاری کرچکے ہیں،دلیل سے بات سمجھنے یا ماننے کی تخم ریزی تو ہمارے سماج میں کی ہی نہیں گئی، یہاں زیادہ تر وعظ ونصیحت سے ہی کام لیا جاتا ہے، تاہم اب بھی ایسے ہزاروں افراد ہیں جن پر کوئی نصیحت اوروعظ بھی اثر نہیں کر رہے۔پولیوویکسین کے حوالے سے برآمد کئے گئے افسانوں کے اثرات سے ہماری جان نہیں چھوٹی تھی کہ کورونا نے انت مچا کر رکھ دی۔اب ملکوں ملکوں ،قریہ قریہ جہاں ویکسی نیشن کے تذکرے ہیں، وہیں کورونا کے مقابلے میں بھی ہمارے ہاں کے لوگ” جو ہو گا دیکھا جائے گا”کہتے ہوئے لنگوٹ کس کر میدان میں اتر آئے ہیں۔وجہ اس مقابلے کی وہی مغرب سے برآمد کی گئیں سازشی تھیوریاں ہیں۔ویکسین سازش ہے اوراس کے ثبوت میں یار لوگ مقناطیس جیب میں لئے پھرتے ہیں ایسے میں ویکسی نیشن مہم کا حال معلوم۔