کورونا کی شافی دوا ٹی جی

کورونا کی شافی دوا ” ٹی جی ” بنانے کا دعویٰ

ویب ڈیسک: سائنس دانوں کا دعویٰ ہے کہ پودوں پر مبنی ایک نئی دریافت شدہ اینٹی وائرل دوا کووِڈـ 19 کی تمام اقسام، یہاں تک کہ ڈیلٹا کے خلاف بھی کافی مؤثر ثابت ہوئی ہے۔

اگرچہ کووِڈـ 19 کی ہر نئی قسم کا ظہورعالمی سطح پر صحت کے حوالے سے تشویش کا باعث بنا ہے. لیکن خاص طورپر ڈیلٹا قسم کو سارسـکوویـڈ وائرس کے سب سے متعدی تناؤ میں سے ایک قراردیا گیا ہے۔ برطانیہ کی یونیورسٹی آف نوٹنگھم کے سائنس دانوں نے ایک نئی تحقیق میں بتایا ہے کہ ٹپسیگرگین (ٹی جی) کی ایک خوراک کروناوائرس کی ہرقسم کی شکل سے ہونے والی انفیکشن کومؤثر طریقے سے بلاک کرتی ہے.

اور اس کی اثرپذیری کی شرح 95 فی صد سے زیادہ ہے۔ انھوں نے یہ دعویٰ کیا ہے کہ ٹی جی بڑی حد تک کووِڈـ 19 کی ہر ایک قسم کو روک سکتا ہے۔ کووِڈـ 19 کے تین غالب متغیّرات (الفا، بیٹا اور ڈیلٹا) میں سے ڈیلٹا نے خلیوں کو نقصان پہنچانے کی سب سے زیادہ صلاحیت ظاہر کی، اور سب سے زیادہ افزائش کی شرح (24 گھنٹے کی مدت کے ساتھ) پر پڑوسی خلیوں میں براہ راست پھیلنے کے قابل تھا جو دوسری دواقسام کے مقابلے میں چار گنا زیادہ تھا۔

یونیورسٹی کی جانب سے جاری کردہ ایک بیان کے مطابق الفا اور ڈیلٹا یا الفا اور بیٹا کے ساتھ مخلوط انفیکشن نے زیادہ نقصان پہنچایا ہے۔ اس مطالعے کے سربراہ مصنف پروفیسرکن چاوشانگ نے ایک بیان میں کہا کہ”ہمارے نئے مطالعے نے ہمیں ڈیلٹا متغیّرکے غلبے کے بارے میں بہتر بصیرت دی ہے۔

اگرچہ ہم نے یہ ظاہر کیا ہے کہ یہ قسم واضح طورپرسب سے زیادہ متعدی ہے. اور شریک انفیکشن میں دیگراقسام کی پیداوار کو فروغ دیتی ہے. ہمیں یہ ظاہر کرتے ہوئے خوشی ہورہی ہے کہ ٹی جی ان سب کے خلاف اتنا ہی مؤثر ہے۔ انھوں نے مزید کہا کہ یہ نتائج مل کر ٹی جی کی اینٹی وائرل صلاحیت کی طرف اشارہ کرتے ہیں جو ایک پوسٹ ایکسپوزر پروفیلیکٹک اور ایک فعال تھراپیوٹک ایجنٹ ہے۔ ڈیلٹا کو ابھی تک سب سے خطرناک قسم کے طور پر دیکھا گیا ہے۔