2022 میں چین اور امریکہ ٹکراؤ

2022 میں چین اور امریکہ کے ٹکراؤ کی پیشن گوئیاں

ویب ڈیسک: چین اور امریکہ کے درمیان کشیدگی 2022 میں مزیدتیز ہو جائے گی کیونکہ ہر فریق اپنے نظام حکومت کی برتری کا مظاہرہ کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔ قیاس آرائیوں پر مبنی منظرناموں اور اشتعال انگیز پیشن گوئیوں کا جائزہ لینے والے ماہرین نے اپنی تحقیق میں خبردار کیا ہے کہ یہ دونوں قومیں 2022 میں اپنے سیاسی نظاموں کی خوبیوں کا مظاہرہ کرنے کے لیے کس طرح مقابلہ کریں گی۔

حال ہی میں ایک چین سے تعلق رکھنے والی ایک ٹینس اسٹار کی مبینہ قید پر بھی امریکا اور مغربی ممالک نے چین پر شدید تنقید کی ہے جبکہ تائیوان کے حوالے سے بھی امریکہ نے کھل کر چینی اقدامات کا راستہ روکنے کا اعلان کیا ہے ۔ دوسری طرف مغربی ممالک بھی چین کو لگام دینے کی امریکی کوششوں کا حصہ بنتے نظر آرہے ہیں اس تناظر میں یورپی ممالک نے چین کے ون بیلٹ ون روڈ کے وژن کا مقابلہ کرنے کے لئے 340 ارب ڈالر کے” گلوبل گیٹ وے ”منصوبے کا بھی اعلا ن کیا ہے ۔

ایک طرف معاشی اور سفارتی محاذ پر یہ سرگرمیاں نوٹ کی جا رہی ہیں تو دوسری طرف حربی میدان میں بھی چین اور امریکہ کے درمیاں ہتھیاروں کی دوڑ شروع ہوچکی ہے اس سلسلے کی تازہ تریں کڑیاں چین اور امریکہ کی جانب سے سپر سانک میزائلوں کے تجربات کے ایک دوسرے پر الزامات ہیں۔ عالمی سطح کے معروف تجزیہ کاروں کی رائے میں امریکہ چین کو اپنے لئے ہر میدان میں بڑا خطرہ بنتے دیکھ رہا ہے اور اگلا سال شروع ہوتے ہی وہ اس محاذ کی طر ف مکمل طور پر متوجہ ہوگا اور پاکستان جیسے ممالک ایک بار پھر آزمائش میں مبتلا نظر آئیں گے۔