اداکار رشید ناز

سینئر اداکار رشید ناز دار فانی سے چل بسے

.پشاور سے تعلق رکھنے والے بین الاقوامی شہرت یافتہ پاکستانی فلم اور ٹیلی ویژن کے سینئر اداکار رشید ناز 73 برس کی عمر میں انتقال کر گئے

آج صبح رشید ناز کی بہو اور اداکارہ مدیحہ نقوی نے اپنے انسٹاگرام پر ایک پوسٹ شیئر کی ،اپنی پوسٹ میں بتایا کہ ’ہمارے پیارے بابا رشید ناز آج صبح اس دنیا سے رخصت ہو گئے، مرحوم کی روح کے ایصال ثواب کے لیے سورہ فاتحہ ضرور پڑھیں۔‘

رشید ناز 9 ستمبر 1948 کو خیبرپختون خوا کے دارالحکومت پشاور میں پیدا ہوئے، انہوں نے بےشمار فلموں اور ڈراموں میں اپنے فن کا لوہا منوایا۔
1971 میں انہوں نے پشتو ٹیلی ویژن ڈرامے میں بطور اداکار اپنے ٹیلی ویژن کیریئر کا آغاز کیا۔ رشید ناز نے کئی پشتو، ہندکو اور اردو زبان کے ڈراموں میں کام کیا۔ ان کا پہلا اردو ڈرامہ ایک تھا گاؤں (1973) تھا۔ ان کا پہلا مقبول ڈرامہ ناموس تھا۔ انہوں نے پاکستان کے پہلے نجی ٹیلی ویژن ڈرامے دشت میں بھی کام کیا۔

یہ بھی پڑھیں:سابق فاسٹ بولرشعیب اختر کی والدہ انتقال کرگئیں

اس کے علاوہ وہ کئی فلموں میں بھی جلوہ گر ہو چکے ہیں، 1988 میں انہوں نے اپنی پہلی پشتو فلم زما جنگ ( "میری جنگ") میں کام کیا۔ ان کی پہلی اردو فلم سید نور کی ڈکیت تھی۔ انہوں نے شعیب منصور کی فلم خدا کے لیے میں بھی کام کیا۔ رشید ناز نے شعیب منصور کے ایک ویڈیو گانے "عشق محبت اپنا پن” میں ایمان علی کے ساتھ بھی کام کیا۔رشید ناز کی مشہور فلموں میں کراچی سے لاہور، ورنہ، خدا کے لیے اور دیگر شامل ہیں۔

انہوں نے خدا زمین سے گیا نہیں ہے ، انکار ، انوکھی، پتھر، اپنے ہوئے پرائے، غلام گردش، دوسرا آسمان، ناموس، پتھر ، آن سمیت دیگر ڈراموں میں اپنی جاندار اداکاری سے شائقین کے دل جیتے۔

مزید دیکھیں :   میگاپراجیکٹ 'صلاح الدین ایوبی' کی تیاریاں شروع