القاعدہ سربراہ ایمن الظواہری

القاعدہ کے سربراہ ایمن الظواہری ڈرون حملے میں مارا گیا، امریکی صدر کی تصدیق

ویب ڈیسک: امریکا کے صدر جوبائیڈن نے افغانستان کے شہر کابل میں امریکی ڈرون حملے میں القاعدہ کے سربراہ ایمن الظواہری کے مارے جانے کی تصدیق کر دی۔
امریکی صدر جو بائیڈن نے اعلان کیا ہے کہ القاعدہ کے سربراہ ایمن الظواہری کابل میں ہونے والے امریکی ڈرون حملے میں ہلاک ہو گئے ہیں۔
امریکی صدر جو بائیڈن نے وائٹ ہاؤس سے اپنے خطاب میں کہا کہ واضح اور قابل یقین شواہد پر ڈرون حملے کی اجازت دی اور دہشت گرد ایمن الظواہری کو انجام تک پہنچا دیا۔ امریکی صدر کا کہنا ہے کہ انٹیلی جنس ایجنسیوں نے رواں سال ایمن الظواہری کی موجودگی کا پتا چلا لیا تھا جو نائن الیون حملے کی منصوبہ بندی میں بھی شامل تھا۔ جوبائیڈن نے مزید کہا کہ ہر قیمت پر امریکا کا دفاع اور اپنے دشمنوں کا ہر جگہ تعاقب کریں گے۔ ایمن الظواہری نے حالیہ ہفتوں میں امریکا اور اتحادیوں پر حملے کے لیے ویڈیوز جاری کیں، الظواہری کی ہلاکت سے امریکیوں کو انصاف ملا ہے۔
امریکی انتظامیہ کا کہنا ہے کہ ایمن الظواہری پر ڈرون حملہ کابل کے مقامی وقت کے مطابق 31 جولائی کی صبح 6 بج کر 18 منٹ پر کیا اور 2 میزائل داغے گئے۔ امریکی انتظامیہ کا ڈرون حملے سے متعلق کہنا ہے کہ ایمن الظواہری اپنے خاندان سمیت کابل کے سیف ہاؤس میں تھا۔ ایمن الظواہری کے مارے جانے کے بعد حقانی نیٹ ورک نے ان کے خاندان کے افراد کو مکان سے نکالا۔

مزید دیکھیں :   شمالی وزیرستان میں فوجی قافلے پر خودکش حملہ، 4 جوان شہید