مشرقیات

پھر بلبلاہٹ سنی جا رہی ہے چاروں طرف سے،کسی کو سمجھ نہیںآرہی کہ وہ کیا کریں سوائے سڑکیں بلاک کرنے کے اور کوئی حل ہی نہیں رہا اور سڑکیں بلاک کردیں تو ان لوگوں کو ہی سب سے زیادہ تکلیف ہوتی ہے جو خود بھی اس بلبلاہٹ کا شکار ہوتے ہیں تو پھر سوال یہ ہے کہ کیا کریں اس ملک کے چھوٹے تاجروں کو تو خزانچی نے پھر بھی تسلی دلاسا دیا ہے کہ مگر چھوٹے سے چھوٹا تاجر بھی یہ شکوہ کر رہا ہے کہ خزانچی کی تسلی دلاسے سے مسئلہ حل ہی نہیں ہوا تاجروں کو ن ایسا ہے جو ایک سو پچاس یونٹ سے کم ماہانہ بجلی استعمال کر تاہو،بہرحال بجلی کے علاوہ ان کے بلوں پر ایک فکس ٹیکس تاجروں کی بلبلاہٹ کا باعث بنا ہوا ہے۔ادھر ہما شما یعنی عام لوگ گھروں میں جو بجلی استعمال کرتے ہیں اس کے گزشتہ مہینے کے بل دیکھ کر ہمارے ہوش وحواس اڑ گئے تھے ،بہت سے لوگوں نے بجلی بچت کے لیے اے سی تک بند کردیئے ہیں جو چار پنکھوں کے محتاج تھے وہ دو پنکھوں سے گزارا کرنے لگے ہیں،کپڑوں کی دھلائی اور استری وغیرہ بھی کم کر دی گئی ہے تاہم باوجود ان سارے اقدامات کے بجلی کی بچت نہیںہوپارہی ،سرکار نے ماہانہ بنیادوں پر بجلی کے نرخ بڑھانا عادت بنا لی ہے تو دوسری طرف فیول پرائس ایڈجسمنٹ کے نام پر ہر صارف سے ہزاروں روپے ماہانہ وصول کئے جارہے ہیں،چھ افراد پر مشتمل فیملی کابل دس ہزار سے کم میں نہیں آرہا،غضب سرکار کا یہ بھی ہے کہ پانی سے بننے والی بجلی استعمال کرنے کے باوجود خیبر پختون خوا کے شہریوں سے فیول پرائس ایڈجسمنٹ کے نام پر ماہانہ بھتہ لیا جارہا ہے ،چلیں یہ بھتہ خوری حکومت کی عادت ہو گی لیکن لوگ کیوں اسے برداشت کر رہے ہیں یہ سمجھ میں نہ آنے والی بات ہے بقول ہمارے ایک دوست کے لوگ کنڈا کلچر کو اپنائے ہوئے ہیں تو پھر سڑکوں پر کیوں نکلیں ان کنڈوں کا جمع خرچ پھر سب پر تقسیم کرکے انہیں ایک ہی لاٹھی سے ہانکا جا رہا ہے اور یہ تو سب جانتے ہیں کہ کنڈا کلچر کو فروغ دینے میں اپنے پیسکو میسکو اور ڈسکو کے اہلکاروں کا کلیدی کردار ہے ،یہ جو لائن مین ہوتے ہیں ان کو اعتماد میں لے کر نجی الیکٹریشن بھرتی کئے گئے ہیں جو کنڈا ڈالنے کی خدمات فراہم کر رہے ہیں آج کل ان کا کام ایک بار پھر بڑھ گیا ہے سرکار نے بجلی مہنگی کر دی ہے اوپر سے ٹیکسوں کی بھرمار ایسے میں جو شریف لوگ بل ادا کرکے بلبلاتے تھے وہ بھی ان نجی الیکٹریشنز کی خدمات اٹھاتے ہوئے کنڈے ڈالنے کی راہیں ڈھونڈ رہے ہیں ،تو جناب عرض یہ ہے کہ جب آمدنی اٹھنی ہو اور بجلی کا بل روپیہ تو پھر بندہ کہاں سے بل جمع کرے آپ اس کی بلبلاہٹ پر توجہ نہیں دیں گے تو وہ چور راستے ڈھونڈے گا اس سے پہلے کہ ہر بندہ چور راستے پر چل پڑے اس بلبلاہٹ پر توجہ دیں اور ہاں چور راستے بند کرنے ہوں تو پیسکو اینڈ ڈسکو پارٹی کا بے ہودہ ناچ بند کرنے پر پہلے توجہ دینے کی ضرورت ہے۔

مزید دیکھیں :   جشن آزادی اور ہمارے رویے