عمران خان حملہ کیس

عمران خان حملہ کیس،جے آئی ٹی کو دوسرے حملہ آورکے شواہد نہیں ملے

ویب ڈیسک : عمران خان حملہ کیس کی جے آئی ٹی تحقیقات میں اہم پیش رفت سامنے آگئی، جے آئی ٹی کو کسی دوسرے حملہ آور کی موجودگی اور فائرنگ کے شواہد نہیں ملے۔ نجی ٹی وی کے مطابق پولیس ذرائع کا کہنا ہے کہ جے آئی ٹی ممبران نے وزیر آباد میں تین بار جائے وقوع کا دورہ کیا، دوران تحقیقات 800سے زائد پولیس اہل کاروں سے پوچھ گچھ کی اور بیانات ریکارڈ کیے،90پولیس اہل کاروں اور افسران سے تحریری بیانات لیے اور 700 سے زائد سے زبانی پوچھ گچھ ہوئی۔
ذرائع کے مطابق ڈی پی او گجرات، ڈی ایس پی وزیرآباد اور تھانہ سٹی وزیرآباد کے ایس ایچ او کا بھی بیان ریکارڈ کیا گیا، جن پولیس اہل کاروں سے بیانات لیے گئے وہ کنٹینر کے اطراف اور چھتوں پر تعینات تھے، آٹھ سو سے زائد گواہان میں سے کسی نے بھی دوسرے حملہ آور کی موجودگی یا فائرنگ کی تصدیق نہیں کی۔ پولیس ذرائع کا کہنا ہے کہ وقوعہ کے بعد عمران خان نے دو حملہ آوروں کی طرف سے فائرنگ کا دعویٰ کیا تھا، دوران تحقیقات کنٹینر پر کھڑے ایک گارڈ کی فائرنگ کے ٹھوس شواہد بھی سامنے آئے، گارڈ کی شناخت کے لیے کنٹینر پر موجود تمام گارڈز کے اسلحہ کا فرانزک ٹیسٹ کروایا جائے گا، شناخت کے بعد گارڈ کو مقدمہ میں شامل تفتیش بھی کیا جائے گا۔

مزید دیکھیں :   یوکرین جنگ: روس کے 19 ارب یورو کے اثاثے منجمد