پھندو سے غائب 14 سالہ بچی

پھندو سے غائب 14 سالہ بچی کادو ماہ بعدبھی پتہ نہ چل سکا

ویب ڈیسک:پھندو سے لاپتہ 14 سالہ بچی کو زمین نگل گئی یا آسمان کھا گیا ،دو مہینے گزرنے کے باوجود تاحال علم نا ہوسکا، والد طفل تسلیاں سنتے سنتے مایوس ہوگیا۔15 نومبر کو چوکی توحید آباد میں یوسف نے اپنی 14 سالہ بیٹی (ر۔ ا)کی گمشدگی کی رپورٹ درج کرائی تھی، بچی کے والد کے مطابق اس کی بیٹی مدرسہ گئی تھی جس کے بعد وہ واپس نا لوٹی رپورٹ درج کرانے کے بعد والد کے مطابق اسے امید تھی کہ پولیس اس کی دادرسی کرے گی تاہم پولیس کی ازلی سستی آڑے آگئی اور ایک مہینہ گزرنے کے بعد 11 دسمبر کو روزنامچہ رپورٹ تھانہ چمکنی بھجوادی گئی لیکن اس کے باوجود بچی کا کوئی سراغ نہیں لگایا جاسکا اور تاحال کیس حل نہیں ہوسکا ۔
بچی کے والد یوسف کے مطابق ان کے گھر میں ہر وقت ماتم کی کیفیت ہوتی ہے، مردہ غائب لیکن ماتم جاری رہتا ہے اور اب تو وہ اللہ سے ہی امید لگائے بیٹھے ہیں کہ ان کی بیٹی کا سراغ مل جائے۔مغویہ بچی دینی تعلیم حاصل کر رہی تھی اور درجہ عالیہ میں زیر تعلیم تھی کا والد یوسف پیشے کے لحاظ سے پینٹر ہے اور سات بچوں کا والد ہے جبکہ مغوی بچی چھٹے نمبر پر ہے بچی کی والدہ دل کے مرض میں مبتلا ہے اور بچی کے لاپتہ ہونے کے بعد سے مسلسل ڈاکٹروں کے پاس زیر علاج ہے۔

مزید دیکھیں :   توہین قرآن کے خلاف شہرشہرمظاہرے،سینٹ میں قراردادمنظور