بری کر دیا

عزیربلوچ کو ایک اور مقدمے میں بھی بری کر دیا گیا

کراچی میں انسداد دہشتگردی کی خصوصی عدالت نے لیاری آپریشن کے دوران پولیس پر حملے، پولیس مقابلے اور اقدام قتل کے مقدمے میں لیاری گینگ وار کے سرغنہ عزیر بلوچ کو عدم ثبوت کی بنیاد پر بری کر دیا گیا۔
ویب ڈیسک: کراچی سینٹرل جیل میں انسداد دہشت گردی کمپلیکس میں خصوصی عدالت نے لیاری آپریشن کے دوران پولیس پر حملے سے متعلق پولیس مقابلہ اور اقدام قتل کے مقدمے کا فیصلہ سنا دیا۔
پراسیکیوشن ایک بار پھر گینگ وار کے سرغنہ عزیر بلوچ اور ذاکر ڈاڈا پر جرم ثابت کرنے میں ناکام رہی۔
عدالت نے پولیس مقابلہ اور اقدام قتل کے مقدمے میں عذیر بلوچ اور ذاکر ڈاڈا کو عدم ثبوت کی بناء پر بری کر دیا۔
عدالت نے فیصلے میں کہا کہ ملزمان کسی اور مقدمہ میں نامزد نہیں تو انہیں رہا ردیا جائے۔
عزیر بلوچ کے وکیل عابد زمان ایڈوکیٹ نے موقف اختیار کیا تھا کہ میرے مؤکلین کیخلاف استغاثہ کوئی ٹھوس شواہد پیش نہیں کرسکا ہے لہذا انہیں بری کیا جائے۔
پولیس کے مطابق 2012 میں کلا کلوٹ میں پولیس آپریشن کے دوران ملزمان نے پولیس پر حملہ کیا تھا۔
ملزمان کیخلاف تھانہ کلاکوٹ میں پولیس مقابلہ اور اقدام قتل کا مقدمہ درج کیا گیا تھا۔

مزید دیکھیں :   عدالتی حکم پر شیخ رشید اڈیالہ جیل منتقل