شہریار آفریدی اور شاندانہ گلزار

شہریار آفریدی اور شاندانہ گلزار رہا، اعلیٰ افسران کیخلاف کارروائی کا فیصلہ

ویب ڈیسک: تحریک انصاف کے رہنما اور سابق وفاقی وزیر شہریار آفریدی اور پی ٹی آئی رہنما شاندانہ گلزار کی رہائی کا حکم جاری، گھر جانے کی اجازت، تفصیلات کے مطابق شہریار آفریدی اور شاندانہ گلزار کی ایم پی او کے تحت گرفتاری کے خلاف کیس کی سماعت اسلام آباد ہائیکورٹ کے جسٹس بابر ستار نے کی۔ عدالتی کارروائی کے دوران دونوں رہنماوں کی ایم پی او کے تحت گرفتاری کا آرڈر معطل کرتے ہوئے انہیں گھر جانے کی اجازت دے دی جبکہ ایس ایس پی آپریشنز اور ڈپٹی کمشنر اسلام آباد پر فرد جرم عائد کرنے کا فیصلہ کر لیا۔
کیس کی سماعت کے دوران ڈی سی اسلام آباد بطور ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ، آئی جی اسلام آباد، چیف کمشنر اسلام آباد، شہریار آفریدی، شاندانہ گلزار اور درخواست گزاروں کے وکیل شیر افضل مروت عدالت کے سامنے پیش ہوئے۔ عدالت میں پیشی کے دوران جسٹس بابر ستار نے شہریار آفریدی کیس میں جاری شوکاز نوٹس پر ڈی سی کا جواب غیر تسلی بخش قرار دیتے ہوئے ڈی سی اسلام آباد کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی کا فیصلہ کیا۔ عدالت نے استفسار کیا کہ ڈی سی صاحب آپ نے اپنے شوکاز کا جواب جمع کروایا ہے، ڈپٹی کمشنر نے سپیشل برانچ اور انٹیلی جنس بیورو کی رپورٹس پڑھ کر سنائیں، جسٹس بابر ستار نے تفصیلات طلب کرتے ہوئے کہا کہ پچھلے 3 ماہ میں آپ کا کوئی ایک ایم پی او کا آرڈر جو عدالت نے برقرار رکھا ہو؟ انہوں نے کہا کہ ذہن میں رکھیں کہ توہین عدالت پر 6 ماہ قید کی سزا ہو سکتی ہے۔ جسٹس بابر ستار نے استفسار کیا کہ آفریدی صاحب آپ کا کوئی گھر ہے اسلام آباد میں؟ جس پر شہریار آفریدی نے بتایا کہ جی، میرا گھر موجود ہے۔ اسلام آباد ہائیکورٹ نے شہریار آفریدی سے متعلق ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ کا ایم پی او آرڈر معطل کرتے ہوئے انہیں اسلام آباد میں اپنی رہائشگاہ جانے کی اجازت دے دی۔

مزید پڑھیں:  سعودی ایئرلائن کے طیارے کو حادثہ، پشاور ایئرپورٹ پر فلائٹ آپریشن بند