فضلہ اٹھانے

59 ہسپتالوں کو میونسپل فضلہ اٹھانے کیلئے معاہدہ کے نوٹس

ویب ڈیسک: واٹر اینڈ سینی ٹیشن سروسز پشاور ( ڈبلیو ایس ایس پی) نے پشاور کے سرکاری اور پرائیویٹ ہسپتالوں کا میونسپل ( غیر طبی) فضلہ اٹھانے کے لئے کمپنی کے ساتھ معاہدہ کرنے کے نوٹس جاری کر دیئے۔ اب تک پانچوں زونز میں 59 ہسپتالوں کو نوٹس جاری کئے گئے ہیں جن میں تقریباً ڈیڑھ درجن نے معاہدوں کے لئے ڈبلیو ایس ایس پی سے بات چیت شروع کر دی ہے جبکہ دیگر مروجہ قوانین اور قواعد و ضوابط کے بارے میں معلومات حاصل کر رہے ہیں۔
معاہدہ نہ کرنے والے ہسپتالوں کو سیل کر دیا جائے گا۔ یہ نوٹس پاکستان تحفظ ماحولیات ایکٹ 1997 ئ، خیبرپختونخوا تحفظ ماحولیات ایکٹ 2014ء کے تحت ضلعی انتظامیہ، خیبرپختونخوا ہیلتھ کیئر کمیشن اور ادارہ تحفظ ماحولیات سے مشاورت کے بعد جاری کئے گئے ہیں۔ اگلے چند روز میں ہسپتالوں کو تیسرا نوٹس جاری کیا جائے گا جس کے بعد میونسپل فضلہ اٹھانے کے لئے ڈبلیو ایس ایس پی کے ساتھ معاہدہ نہ کرنے والے ہسپتالوں کے خلاف خیبرپختونخوا ہیلتھ کئیر کمیشن، ضلعی انتظامیہ اور ادارہ تحفظ ماحولیات کارروائی کرتے ہوئے سیل کریں گے۔
ڈبلیو ایس ایس پی پہلے ہی 10 ہسپتالوں اور مراکز صحت کا غیر طبی فضلہ اٹھا رہی ہے۔ شہر کے ہسپتالوں کے پاس غیر طبی فضلہ تلف کرنے کے لئے جگہ اور مطلوبہ آلات نہیں ہیں، رات کی تاریکی میں ہسپتالوں کا فضلہ غیر مقررہ مقامات پر پھینکا جاتا ہے جس سے ماحولیاتی آلودگی اور بیماریاں پھیل رہی ہیں، شہری پاکستان سیٹیزن پورٹل، ضلعی حکومت اور ضلعی انتظامیہ کو شکایات کرتے ہیں ماحول کو صاف رکھنے، شکایات کے ازالہ اور ہسپتالوں کا فضلہ محفوظ طریقے سے تلف کرنے کے لئے ہسپتالوں کو مروجہ قوانین کے تحت معاہدے کرنے کے نوٹس جاری کئے گئے ہیں جس کا مثبت جواب آرہا ہے۔ پہلے مرحلے میں کاغذی قانونی کارروائی پوری کی جارہی ہے۔

مزید پڑھیں:  ایچ آر سی پی نے پی ٹی آئی پر پابندی کے فیصلے کو غیر آئینی قرار دے دیا