روسی صدر

روسی صدر پیوٹن 24سال بعد شمالی کوریا پہنچ گئے

ویب ڈیسک: روسی صدر ولادیمیر پیوٹن 24سال بعد شمالی کوریا کے پہلے دورے پر پیونگ یانگ پہنچ گئے ہیں ،کم جونگ ان نے استقبال کیا۔
حالیہ سالوں بالخصوص یوکرین پر روس کے حملے کے بعد دونوں ممالک کے درمیان تعلقات مزید گہرے ہوئے ہیں۔
برطانوی نشریاتی کی رپورٹ کے مطابق امریکا کی جانب سے دونوں ممالک کے درمیان بڑھتے ہوئے تعلقات پر تشویش کا اظہار کیا گیا ہے جبکہ کریملین کی جانب سے روسی صدر کے دورے کو دوستانہ دورہ قرار دیا جا رہا ہے۔
روسی میڈیا کے مطابق دورے کے موقع پر روسی صدر شمالی کوریا کے ساتھ سکیورٹی سمیت مختلف شعبوں میں پارٹنرشپ کے معاہدے کریں گے جبکہ مشترکہ اعلامیہ بھی جاری کیا جائے گا۔
روسی صدر کے وفد میں نئے ڈیفنس منسٹر آندرے بیلوسوف، وزیر خارجہ سرگئی لاروف اور ڈپٹی پرائم منسٹر الیگزینڈرنوواک بھی شامل ہیں۔
روسی صدر پیونگ یانگ کے اسی کم سوسان گیسٹ ہائوس میں قیام کریں جہاں 2019 میں شمالی کوریا کے دورے کے موقع پر چینی صدر نے قیام کیا تھا۔
صدر پیوٹن کی جانب سے شمالی کوریا کے دورے کے بعد ویتنام کے دورہ کا امکان ہے جہاں مخلتف معاملات پر تبادلہ خیال کیا جائے گا۔

مزید پڑھیں:  پی ٹی آئی پر پابندی کیلئے پارلیمنٹ میں مشاورت کریں گے،وزیردفاع