کرائم منسٹر

تل ابیب میں اسرائیلی شہری سڑکوں پر آگئے،نیتن یاہو کو کرائم منسٹر قراردیا

ویب ڈیسک: اسرائیل کے دارالحکومت تل ابیب میں ہزاروں اسرائیلی شہری غزہ جنگ کے خلاف سڑکوں پر آگئے ، وزیراعظم نیتن یاہو کو کرائم منسٹر قرار دیتے ہوئے جنگ بندی کا مطالبہ کیا ۔
غیر ملکی میڈیا کے مطابق نیتن یاہو حکومت کے جنگ سے نمٹنے کے خلاف تل ابیب میں ہفتہ وار بنیادوں پر بڑے احتجاجی مظاہرے ہو رہے ہیں،احتجاج میں بہت سے مظاہرین نے کرائم منسٹر اور جنگ بند کرو کے پوسٹرز اٹھا رکھے تھے۔
احتجاج میں شریک 66سالہ کنٹریکٹر شائی ایرل نے کہا کہ میں یہاں اس لیے ہوں کیونکہ میں اپنے پوتے کے مستقبل سے ڈرتا ہوں، ان کا کوئی مستقبل نہیں ہو گا اگر ہم باہر نہیں نکلے اور اس خوفناک حکومت سے چھٹکارا حاصل نہیں کیا۔
احتجاجی تنظیم ہوفشی اسرائیل کے ایک اندازے کے مطابق ریلی میں ایک لاکھ 50 ہزار سے زائد افراد نے شرکت کی اور اسے غزہ جنگ شروع ہونے کے بعد کی سب سے بڑی ریلی قرار دیا۔
کچھ مظاہرین شہر کے ڈیموکریسی سکوائر میں سرخ پینٹ لگائے زمین پر لیٹ کر احتجاج کر رہے تھے۔
احتجاجی مظاہرین سے خطاب میں اسرائیل کی داخلی سکیورٹی ایجنسی شِن بیٹ کے سابق سربراہ یوول ڈِسکن نے نیتن یاہو کو اسرائیل کا بدترین وزیر اعظم قرار دیا۔
بہت سے لوگ ملک کے دائیں بازو کے اتحاد سے مایوس ہیں، جس میں سکیورٹی کے وزیر اتمار بین گویر اور دیگر انتہائی دائیں بازو کے الٹرا نیشنلسٹ شامل ہیں۔
50 سالہ ٹور گائیڈ یورام جس نے اپنا آخری نام بتانے سے گریز کیا، اس نے بتایا کہ وہ ہر ہفتہ وار احتجاج میں شرکت کر رہے ہیں کیونکہ اسرائیل کو نیتن یاہو کی وجہ سے الیکشن لڑنے کی ضرورت ہے۔
مجھے امید ہے کہ حکومت گر جائے گی، اگر ہم 2026 میں انتخابات کی اصل تاریخ پر جائیں تو یہ جمہوری الیکشن نہیں ہو گا۔

مزید پڑھیں:  اسلام آباد ہائیکورٹ :صنم جاوید کی گرفتاری غیرقانونی قرار