فون ٹیپنگ کا نوٹیفکیشن چیلنج

خفیہ ادارے کو فون ٹیپنگ کی اجازت دینے کا نوٹیفکیشن چیلنج کردیاگیا

ویب ڈیسک: اسلام آباد ہائی کورٹ میں خفیہ ادارے کو فون ٹیپنگ کی اجازت دینے کی منظوری کا نوٹیفکیشن چیلنج کردیاگیا۔
پاکستان بار کونسل کے 6ممبران نے نوٹیفکیشن کے خلاف اسلام آباد ہائی کورٹ میں درخواست دائر کردی۔
درخواست گزاروں میں پاکستان بار کونسل کے ممبر شفقت محمود چوہان ، عابد زبیری، چودھری اشتیاق، منیر احمد کاکڑ ، طاہر فراز عباسی اور عابد ساقی شامل ہے۔
درخواست میں کہا گیا ہے کہ ٹیلی کمیونیکشن ایکٹ کی سیکشن 54 کے تحت جاری نوٹیفکیشن غیر قانونی ہے، فیئر ٹرائل ایکٹ 2013 میں اس حوالے سے مکمل میکنزم دیا گیا۔
درخواست گزاروں نے استدعا کی کہ خفیہ ادارے کو فون ٹیپنگ کی اجازت دینے کا نوٹیفکیشن غیر قانونی قرار دیکر کالعدم قرار دیا جائے۔
درخواست میں مزید یہ بھی استدعا کی گئی کہ جب تک کیس زیر التوا ہے تب تک نوٹیفکیشن معطل کیا جائے۔
خیال رہے درخواست گزاروں نے درخواست میں سیکرٹری آئی ٹی ، سیکرٹری دفاع ، سیکرٹری داخلہ اور پی ٹی اے کو بھی فریق بنایا ہے۔

مزید پڑھیں:  صنم جاوید کو اسلام آباد ہائیکورٹ میں پیش کرنے کا حکم