transgenders threats

پشاور کے خواجہ سرا سے زیادتی کے بعد بدستور دھمکیاں

ویب ڈیسک(پشاور)پشاور کےخواجہ سرا سےزیادتی کےبعد دھمکیوں کاسلسلہ رک نہ سکا، حیل عرف صدف نامی خواجہ سرا نے بڈھ بیر پولیس سٹیشن میں راز خان اور طارق کےخلاف جنسی زیادتی کا مقدمہ درج کیا تھا، ایف آئی آرکے مطابق بڈھ بیر بازید خیل میں2 افراد نے خواجہ سرا کو پروگرام کے بہانےلےجاکراسلحہ کی نوک پر زیادتی کا نشانہ بنایا۔

خواجہ سرا صدف نےمشرق ٹی وی سےبات چیت کرتےہوئےکہاکہ یہ واقعہ دو ہفتےپہلےپیش آیاتھا اور پروگرام سے واپسی پر اسلحہ کی نوک پرہمیں زبردستی نامعلوم مقام پر لےجاکرجنسی تشدد کا نشانہ بنایا گیا،انہوں نےکہا کہ اس واقعہ کےبعد دھمکیوں سے دو بار راز خان اور طارق خان کےحجرے میں میوزیکل پروگرام بھی کیالیکن ان کی ڈیمانڈ اب حد سےتجاوزکرچکی ہے۔

صدف کاکہناتھا کہ روزانہ کی بنیادپر جان سے مارنے کی دھمکیاں مل رہی ہیں، خواجہ سرا سویرا کےمطابق پولیس نے ایف آئی آر درج کرنے میں بھی چاردن تاخیرکی اورمیڈیکل رپورٹ کی مجبوری کےتحت پولیس کو ایف آئی آر درج کرناپڑی، پولیس نے ملزموں سے صلح کرنےکیلئےکہا اورساتھ میں خبرداربھی کیاکہ نامزد ملزم علاقےکےبااثراورخطرناک لوگ ہیں اوربہتریہی ہوگاکہ تم لوگ آپس میں صلح کرلو۔

پولیس نےخواجہ سرا کےالزامات مسترد کرتےہوئےکہاہے کہ متاثرہ خواجہ سرا وقوعہ کی نشاندہی نہیں کررہے تھے اور بعد میں نشاندہی پرایف آئی آر اسی وقت درج کی گئی، پولیس کاکہناتھا کہ نامزد ملزموں کےخلاف پہلے بھی کارروائی ہوئی ہےاور ملزموں نے عدالت سےضمانت قبل از گرفتاری کروائی ہے۔