پختونخوا کابینہ میں بجٹ منظوری، پشاور ہائیکورٹ کا ایڈووکیٹ جنرل کو نوٹس

ویب ڈیسک:خیبر پختونخوا کابینہ میں بجٹ منظور کیے جانے کے خلاف درخواست پر پشاور ہائیکورٹ کی جانب سے ایڈووکیٹ جنرل کو نوٹس جاری کردیا گیا۔
ذرائع کے مطابق پشاور ہائیکورٹ کے جسٹس اعجاز انور اور جسٹس شاہد خان پر مشتمل 2 رکنی بینچ نے صوبائی کابینہ کی بجٹ منظوری کے خلاف درخواست دائر کی گئی۔
وکیل امین الرحمٰن یوسفزئی ایڈووکیٹ نے عدالت کو بتایا کہ درخواست گزار خیبرپختونخوا اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر ہیں۔
ان کا کہنا تھا کہ مارچ کے مہینے کا بجٹ اسمبلی میں پیش کیا گیا اور منظور کیا گیا تاہم اپریل کے بجٹ کے لیے پراسس کو فالو نہیں کیا گیا اور کابینہ سے بجٹ منظوری کر لی۔
پشاور ہائیکورٹ میں دائر درخواست میں اپوزیشن کی جانب سے مؤقف اختیار کیا گیا ہے کہ بجٹ منظوری کے لیے جس قانون کا سہارا لیا گیا ہے یہ صرف نگراں حکومت کے لیے ہے۔
درخواست میں بتایا گیا ہے کہ بجٹ منظوری کے لیے اسمبلی میں پیش کیا جائے گا اور اس کے بعد منظوری لی جائی گی۔ مختلف پراجیکٹس کے لیے فنڈز کو بھی استعمال نہیں کیا جاسکتا۔
بعد ازاں عدالت نے ایڈووکیٹ جنرل کو نوٹس جاری کرتے ہوئے سماعت 2 مئی تک ملتوی کردی۔

مزید پڑھیں:  یونان میں گرفتار پاکستانی خاتون صحافی کو قونصلر رسائی مل گئی