57کھرب ارب کا قرضہ

حکومت نے بلند شرح سود پر 57کھرب36 ارب کا قرضہ لیا

ویب ڈیسک: حکومت نے رواں مالی سال کے 10ماہ کے دوران بلند شرح سود پر57کھرب 36ارب روپے کا ریکارڈ قرضہ لیا۔
سٹیٹ بینک آف پاکستان کی جانب سے جاری حالیہ اعداد و شمار سے پتا چلتا ہے کہ کرنسی کی لاگت بلند ہونے کے باوجود موجودہ حکومت بینکوں سے بھاری قرضے لے رہی ہے۔
مرکزی بینک نے رپورٹ کیا کہ حکومت نے مالی سال 2024 میں جولائی تا اپریل کے دوران 57کھرب 36 ارب روپے کے قرضے لیے جبکہ رواں مالی سال جولائی تا مارچ کے دوران سود کی مد میں 55کھرب 17ارب روپے کی ادائیگی کی۔
رواں مالی سال کے دوران قرضہ صرف موجودہ حکومت نہیں بلکہ نگران حکومت نے بھی لیا، وہ بھی بھاری قرضے لینے کی ذمہ دار ہے۔
30 اپریل کو ٹریژری بلوں کی آخری نیلامی میں، 3، 6 اور 12 ماہ کے کاغذات کا اوسط منافع 21 فیصد تھا، قرضوں پر 21 فیصد کا منافع حقیقی طور پر قرضوں کا پھندا ہے، جس کے سبب حکومت سود کی ادائیگی کے لیے مزید قرضے لینے پر مجبور ہوتی ہے۔
اسٹیٹ بینک مہنگائی کے دبا کے خوف کے سبب شرح سود میں کمی کرنے سے قاصر ہے، جبکہ رواں مالی سال کے دوران منفی نمو یا انتہائی ناقص ترقی کی توقعات کو نظر انداز کر رہا ہے۔
مزید تفصیلات سے پتا چلتا ہے کہ رواں مالی سال کیابتدائی 9 ماہ کے دوران سود کی ادائیگی محصولات وصولی کے 76 فیصد کے برابر رہی، سود کی ادائیگی 55کھرب 17ارب روپے مالی سال 2024 میں جولائی تا اپریل کے دوران لیے گئے قرضوں 57کھرب 35ارب روپے کے تقریباً برابر رہی، یہ ایک سنگین صورتحال ہے کیونکہ سود کی رقم مجموعی آمدنی سے 56 فیصد سے زائد ہو چکی ہے۔
اعداد و شمار سے پتا چلتا ہے کہ مالی سال 2023 کے دوران قرضوں پر سود کی ادائیگی 59 کھرب 35 ارب روپے رہی، جس کا حجم گزشتہ مالی سال کے دوران 33 کھرب 31 ارب روپے رہا تھا، مالی سال 2023 میں جی ڈی پی کا حجم نمایاں طور پر بڑھ کر 846 کھرب 57 ارب روپے رہا، جو مالی سال کے دوران 666 کھرب 23 ارب روپے رہا تھا۔

مزید پڑھیں:  ہری پور، شدید گرمی کی وجہ سے سکول میں بچوں کی حالت غیر