عمران خان

ملکی حالات :عمران خان کا آرمی چیف کو خط لکھنے کافیصلہ

ویب ڈیسک: پاکستان تحریک انصاف کے بانی چیئرمین عمران خان نے ملکی حالات پر آرمی چیف کو خط لکھنے کا فیصلہ کیا ہے ۔
اس حوالے سے عمران خان نے کہا کہ ملکی حالات پر آرمی چیف کو خط لکھوں گا، پبلک مینڈیٹ کے مطابق حکومت بنانی پڑے گی اس کے بغیر ملک نہیں چل سکتا۔
انہوں نے کہا کہ ملک کی ٹیکس کلیکشن 13.3 ٹریلین ہے، 9.3 ٹریلین ہم نے قرضوں کے سود کی مد میں ادا کرنے ہوتے ہیں، اس طرح سے 24 کروڑ آبادی کا ملک کیسے چلے گا، ملک کی آمدنی میں اضافہ ہو نہیں رہا۔
سرمایہ کاری کے لیے کوئی تیار نہیں، بجٹ سے پہلے بجلی اور گیس کی قیمتوں میں مزید اضافہ ہو گا تنخواہ دار طبقہ سڑکوں پر ہوگا۔
اڈیالہ جیل میں شیر افضل مروت سے متعلق میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے سابق وزیر اعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ شیر افضل مروت نے پارٹی کے لیے زبردست کام کیا مگر سیاسی جماعت میں دائرے کے اندر رہ کر کام کرنا ہوتا ہے،مروت کو کئی مرتبہ سمجھایا پارٹی پالیسی کی خلاف ورزی نہ کرے۔
عمران خان نے مزید کہا کہ شیر افضل مروت ہر دوسرے دن کسی نہ کسی پارٹی لیڈر پر چڑھائی کر دیتا تھا، سمجھایا کہ جنگ باہر والوں سے ہوتی ہے پارٹی میں لڑائی نہیں ہوتی۔
بانی چیئرمین پی ٹی آئی کا یہ بھی کہنا تھا کہ سعودی وفد کے دورے کے موقع پر شیر افضل مروت نے متنازع بیان دیا جبکہ محمد بن سلمان نے میرے کہنے پر 2 مرتبہ اسلامی تعاون تنظیم کانفرنس کروائی تھی۔
سابق وزیراعظم عمران خان نے بتایا کہ شیر افضل مروت نے پارٹی کے لیے بہت کام کیا لیکن ان کو پارٹی پالیسی کی بار بار خلاف ورزی نہیں کرنی چاہیے،اب بھی پارٹی پالیسی کے مطابق چلیں تو کوئی مسئلہ نہیں ہے، ان کو نوٹس جاری کیا ہے جواب دیں گے تو ٹھیک ہے، کوئی پارٹی ڈسپلن میں رہے تو ٹھیک خلاف ورزی کرے تو پورس کا ہاتھی بن جاتا ہے۔
شیر افضل مروت سے جیل میں ملاقات سے متعلق سوال کا جواب دینے سے بانی پی ٹی آئی نے گریز کیا۔
عمران خان نے کہا کہ 190ملین پانڈ معاہدہ کو خفیہ رکھنا پراپرٹی ٹائیکون اور نیشنل کرائم ایجنسی کی ڈیمانڈ تھی، برطانیہ میں پیسے منی لانڈرنگ نہیں بلکہ مشکوک ٹرانزیکشن کی وجہ سے پکڑے گئے تھے ، سول عدالت میں کیس چلتا تو مزید پانچ سال تک پیسے پاکستان نہ آسکتے۔
بیرون ملک عدالتوں میں مختلف کیسوں میں پاکستان کے پہلے ہی 100ملین ڈالر ضائع ہو چکے، 190 ملین پانڈ سے متعلق انکوائری نیب میں بند کی جاچکی تھی جو دو سال بعد دوبارہ کھولی گئی، سپریم کورٹ کے اکانٹ میں جو 35 ارب روپے آئے اس پر 13 ارب کا منافع بھی بن چکا ہے، بنجر زمین پر القادر ٹرسٹ یونیورسٹی بنائی جو بچوں کو مفت تعلیم دے رہی ہے۔
عمران خان مزید کہنا تھا کہ نواز شریف نے توشہ خانہ سے6 لاکھ روپے میں بلٹ پروف گاڑی خریدی اس کو بری کرنے کا سوچا جا رہا ہے، زرداری نے توشہ خانہ سے تین گاڑیاں لیں وہ عدالت سے استثنیٰ مانگ رہا ہے، حسن شریف نے 18 ارب روپے کی پراپرٹی بیچی اس پر کوئی بات نہیں کر رہا۔
مجھ پر توشہ خانہ کا چوتھا کیس چلانے جا رہے ہیں، زرداری اور نواز شریف کی طرح ملک سے باہر نہیں جائو ں گا ، انکے تو محلات بیرون ملک ہیں وہاں شاپنگ بھی کرنی ہوتی ہے۔

مزید پڑھیں:  کوہاٹ، شہری علاقوں کے مکین پینے کے صاف پانی کو ترس گئے