جسٹس اطہر من اللہ

سپریم کورٹ میں کوئی کالی بھیڑیں نہیں ہیں: جسٹس اطہر من اللہ

ویب ڈیسک: سپریم کورٹ کے جج جسٹس اطہر من اللہ نے نیب ترامیم کالعدم قرار دینے کے خلاف اپیلوں پر سماعت کے دوران اٹارنی جنرل سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا وزیراعظم کو جا کر بتا دیجیے گا کہ یہاں کوئی کالی بھیڑیں نہیں ہیں۔
سپریم کورٹ میں نیب ترامیم کالعدم قرار دینے کے خلاف حکومتی اپیلوں پر سماعت چیف جسٹس پاکستان قاضی فائز عیسی ٰکی سربراہی میں 5 رکنی بینچ نے کی۔
سماعت کے دوران ایک موقع پر جسٹس اطہر من اللہ نے اٹارنی جنرل منصور عثمان اعوان سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا اٹارنی جنرل صاحب، وزیراعظم کو جا کر بتا دیجیے گا کہ سپریم کورٹ میں کوئی کالی بھیڑیں نہیں ہیں۔
جسٹس اطہر من اللہ کا مزید کہنا تھا وزیراعظم سے کہیں اگر سپریم کورٹ میں کوئی کالی بھیڑیں ہیں تو پھر آپ ان کے خلاف ریفرنس دائر کریں۔
یاد رہے کہ دو روز قبل وزیراعظم شہباز شریف نے مسلم لیگ ن کی جنرل ورکرز کونسل کے اجلاس میں تقریر کے دوران کہا تھا ججز کی اکثریت ملکی خوشحالی پر متفق ہے لیکن عدلیہ میں موجود چند کالی بھیڑیں عمران خان کو ریلیف دینے پر تلی ہوئی ہیں۔

مزید پڑھیں:  تھانہ گلبرگ کی حدود میں نامعلوم افراد کی فائرنگ سے موٹر سائیکل سوار زخمی