اسحاق ڈار

غزہ میں نہتے عوام کو بربریت کا نشانہ بنایا جارہا ہے،اسحاق ڈار

ویب ڈیسک: نائب وزیر اعظم و وزیر خارجہ اسحاق ڈار نے کہا ہے کہ غزہ میں نہتے عوام کو بربریت کا نشانہ بنایا جارہا ہے، غزہ میں جو کچھ ہورہا ہے وہ انتہائی تشویشناک اور غیر معمولی سانحہ ہے،مظالم روکے جائیں ۔
ڈی 8ممالک کے وزرائے خارجہ کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیرخارجہ اسحاق ڈارنے کہا کہ غزہ میںجو ظلم ہورہا ہے اس کا تصور بھی نہیں کیا جاسکتا، 40 ہزار افراد شہید ہوچکے، دنیا خواتین اور بچوں سمیت شہریوں کے اندھا دھند قتل کا مشاہدہ کررہی ہے۔
انہوں نے کہا کہ کئی فلسطینی جان لیوا زخموں کا شکار ہیں یا معذوری کاسامنا کررہے ہیں، امدادی قافلوں پرحملے اور رفح بارڈر کراسنگ پر قبضہ انسانی امداد کو روکنیکے مترادف ہے۔
نائب وزیراعظم کا کہنا تھا کہ اسرائیلی فوج فلسطینیوں کے وجود کو نشانہ بنانے کیلیے اسپتالوں اور اہم انفرا اسٹرکچرپربمباری کررہی ہے۔
عالمی ادارہ صحت کیمطابق غزہ کے 36 ہسپتالوں میں سے صرف 12 کام کررہے ہیں، بین الاقوامی عدالت انصاف کی جانب سے اسرائیل کو رفح میں فوجی کارروائی روکنے کے حکم پر بلا تاخیرعمل کیا جانا چاہیے، اس سال یہ تیسرا موقع ہے جب 15ججز کے پینل نے ایسا حکم جاری کیا ہے۔
اسحاق ڈار نے مزید کہا کہ ڈی 8 وزرائے خارجہ کے اجتماع سے فلسطینیوں کی حمایت کا مضبوط پیغام جاناچاہیے،
ہمیں اسرائیلی جارحیت کو روکنے کے لیے فوری بین الاقوامی کارروائی کیلیے مہم چلانی چاہیے،
غزہ کیلئے انسانی امداد کے تمام راستے کھولنے کے لیے ٹھوس کارروائی ہونی چاہیے، پاکستان اپنی طرف سے نہتے فلسطینی بھائیوں اور بہنوں کیلئے امدادی سامان بھیج چکاہے۔

مزید پڑھیں:  امریکا میں مسلح شخص کی فائرنگ، 3 افراد ہلاک، 10 زخمی