EARTHQUAKE

قیامت خیز دن کو 16 برس بیت گئے

ویب ڈیسک (اسلام آباد) آج سے 16 سال قبل 8 اکتوبر 2005 کوصبح 8 بجکر 52 منٹ پرآنےوالےزلزلےنےآزاد کشمیراورخیبر پختونخوا کے کئی شہروں کو کھنڈرات میں بدل دیا تھا۔ قیامت خیززلزلے میں ایک لاکھ سےزائد انسانی جانیں ضائع اورہزاروں افرادزندگی بھرکےلیے جسمانی معذوری کاشکارہوئےتھےجبکہ لاکھوں افراد بےگھرہوگئےتھے۔

اسلام آباد میں 2005 کے زلزلے میں جاں بحق افراد کی یاد میں دعائیہ تقریب منعقد کی گئی، جہاں زلزلے میں جاں بحق افراد کی یاد میں ایک منٹ کی خاموشی اختیار کی گئی، تقریب میں مارگلہ ٹاور کے باہر جاں بحق افراد کے ورثا اور سول سوسائٹی کے ممبران بھی شریک ہوئے۔

راولاکوٹ کے ڈسٹرکٹ کمپلیکس میں بھی دعائیہ تقریب کا انعقاد کیا گیا، جہاں ایک منٹ کی خاموشی کے ساتھ سائرن بھی بجایا گیاجبکہ بالاکوٹ گورنمنٹ ہائی سکول میں شہداء زلزلہ کے لئے قرآن خوانی کا اہتمام کیا گیا۔

واضح رہے تباہ کن زلزلے سے بالاکوٹ کا95 فیصد انفراسٹرکچر تباہ ہوا جبکہ مظفرآباد ، باغ، ہزارہ اور راولاکوٹ میں ہزاروں افراد متاثر ہوئے جبکہ اسلام آباد کے مارگلہ ٹاورز کا ایک حصہ زمین بوس ہو گیا تھا، زلزلےسےخیبر پختوا اور آزاد کشمیر میں بڑے پیمانے پر تباہی آئی تھی۔

8اکتوبرکےزلزلے سے 28لاکھ افراد بےگھربھی ہوئے تھے، اس زلزلے میں مظفرآباد کا علاقہ سب سے زیادہ متاثر ہوا، جبکہ مظفر آباد میں مکانات، اسکولز، کالجز، دفاتر، ہوٹلز، اسپتال، مارکیٹیں، پلازےملبے کا ڈھیر بن گئے تھے۔

رپورٹ کےمطابق ریکٹر اسکیل پریہ زلزلہ زیرزمین 15 کلومیٹرکی گہرائی میں آیا جس کی شدت7 اعشاریہ6 ریکارڈ کی گئی تھی۔