ایک خفیہ دورے کا بھونچال

سعودی عرب اور اسرائیل کے درمیان تعلقات کی نارملائزیشن کا کوئی واقعہ رونما ہوتا ہے اور دونوں طرف کی قیادت کیمروں کی روشنیوں کی چکا چوند میں کسی مشترکہ کاغذ پر دستخط کرتی نظر آتی ہے تو اس میں حیران ہونے کی کوئی بات نہیں ہو گی ۔سعودی عرب نے فلسطینیوں کی حمایت تو کی مگر اس توازن کے ساتھ کہ یہ حمایت اسرائیل دشمنی کی حدود میں داخل نہ ہو۔شاید یہی وجہ ہے کہ سعودی عرب کیمپ ڈیوڈ سمجھوتے سے بے تاثر انداز میں الگ تھلک رہا اور اس پر زیادہ ردعمل کا اظہار نہیں کیا ۔کیمپ ڈیوڈ سمجھوتہ عرب دنیا میں اسرائیل کے وجود کو تسلیم کرنے کے حوالے سے بارش کا پہلا قطرہ تھا ۔برسوں بعد اب عرب ملکوں کی طرف سے اسرائیل کو تسلیم کرنے کی جو برکھا برس رہی ہے اسی پہلے قطرے کا تسلسل ہے۔ کیمپ ڈیوڈ سمجھوتے کے تحت مصر وہ پہلا عرب ملک تھا جس نے فلسطینیوں کی مزاحمت کی حمایت میں ہاتھ اُٹھالیا اور اسرائیل کو حقیقت کے طور پر تسلیم کرتے ہوئے اس سے معمول کے تعلقات کا راستہ اختیار کیا ۔فلسطینی اور عرب رائے عامہ اس سمجھوتے کی مخالفت کرتے رہے مگر مصر کی حکومت نے اس احتجاج کو پرکاہ برابر اہمیت نہیں دی ۔اب زمانہ خاصا بدل گیا ہے اور عرب رائے عامہ میں اسرائیل کے حوالے سے پہلی جیسی حساسیت باقی نہیں رہی ۔اسامہ بن لادن نے اپنی تحریک کے لئے فلسطینی عوام کی حالت زار سے طاقت کشید کرنے کی حکمت عملی اختیار کی مگر انہوںنے جو راستہ اختیار کیا اس کی بنا پر ان کی طاقت کو کچل ڈالنا زیادہ آسان رہا ۔امریکی صدر کلنٹن کو دنیا کے تین بڑے تنازعات فلسطین ،شمالی آئر لینڈ اور کشمیر حل کرانے کا شوق چڑایا ۔ انہوںنے فلسطینی قیادت اور اسرائیل کے درمیان اوسلو معاہدہ کرایا اور اپنے تئیں مسئلہ فلسطین حل کر دیا ۔اس سے فلسطینیوں کو لوکل اتھارٹی جیسی حیثیت تو حاصل ہوئی مگر اقتدار اعلیٰ کا خواب پورا نہ ہو سکا ۔اسی طرح شمالی آئرلینڈ میں آئرش ری پبلکن آرمی اور برطانوی حکومت کے درمیان بھی وہ ڈھیلا ڈھالا معاہدہ کرانے میں کامیاب رہے ۔سعودی عرب میں گزشتہ کچھ مدت سے طاقت کی اندرونی کشمکش کی سی کیفیت بھی دکھائی دیتی رہی عین ممکن ہے اس کا تعلق بھی اسرائیل کے حوالے سے ہو۔اب اچانک اسرائیلی اخبارات نے یہ خبر بریک کی ہے کہ اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے سعودی عرب کا خفیہ دورہ کرکے سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان سے ملاقات کی ہے۔امریکی اخبار وال سٹریٹ جرنل اور اسرائیلی اخبار ہیرٹز سمیت کئی عالمی ذرائع ابلاغ نے نیتن یاہو کے دورہ ٔ سعودی عرب کی تصدیق کی ہے ۔ہیرٹز کے مطابق نیتن ہاہو،اسرائیلی وزیر خارجہ اور موساد کے چیف کے ساتھ نجی طیارے میں سعودی شہر نیوم پہنچے جہاں انہوںنے پرنس محمد بن سلمان سے امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو کے ساتھ ملاقات کی۔ اخبارات نے اسرائیلی جہاز کے ٹیک آف ،سعودی عرب میں قیام اور اسرائیل واپسی کا وقت بھی بیان کیا ہے ۔فلائٹ ٹریکنگ ویب سائٹس نے بھی اس بات کی تصدیق کی ہے کہ اسرائیل سے اُڑ کر ایک جہاز سعودی عرب آیا اور پھر واپسی کی اُڑان بھرکر اسرائیل پہنچا ۔ان واضح ثبوتوں کی روشنی میں اس خفیہ دورے کی تردید کرنا بے معنی ہے ۔ خفیہ ملاقات کی خبروں کی دھند میں ہی اسرائیل نے اپنے ملک کا دورہ کرنے والے سعودی شہریوں کو خصوصی سلوک کا مستحق جانتے ہوئے قرنطینہ کی شرط سے مستنثیٰ قرار دیا ۔اسرائیلی اخبارہیرٹز نے تو اسی دھند میں ہی ایک اور مضمون میں یہ بتانا بھی ضروری سمجھا کہ اس ملاقات کے لئے دوردراز اور کم اہمیت کے حامل سعودی شہر نیوم کا انتخاب کیوں کیا؟۔ اسرائیل اور سعودی عرب کے درمیان تعلقات کا آغاز پاکستان پر بھی کئی حوالوں سے اپنے اثرات مرتب کرسکتا ہے ۔چند دن پہلے وزیر اعظم عمران خان نے ایک ٹی وی چینل کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا کہ پاکستان پر امریکہ اور'' ایک اور'' ملک اسرائیل کو تسلیم کرنے کے لئے دبائو ڈال رہے ہیں ۔ایک اور ملک کا اشارہ سعودی عرب کی جانب ہی سمجھا گیا تھا ۔'' ایک اور ملک ''کی جو بات ملفوف انداز میں عمران خان نے کی تھی اس ملاقات کے بعد وہ راز اب طشت ازبام ہو چکا ہے ۔پاکستان کی مشکل یہ ہے کہ کشمیر کا مسئلہ اس کے وجود ،بقا اور دفاع کے ساتھ جڑا ہوا ہے ۔اسرائیل کو تسلیم کرنے کے بعد دوست اور برادرملک ایک اور فرمائش کے ساتھ سامنے آنا شروع ہوجائیں گے اور وہ فرمائش ہوگی کشمیر پر بھارت کے قبضے کو حقیقت کے طور پر تسلیم کرنا اور کنٹرول لائن کو مستقل سرحد تسلیم کرنا ۔فرمائشوں کی کوئی حد نہیں ہوتی ۔ہل من مزید کے مطالبات کبھی ختم نہیں ہوتے۔دلچسپ خبر یہ ہے کہ ابوظہبی اور اسرائیل کے سربراہان مملکت کے نام امن کے عالمی نوبیل پرائز کے لئے چنے جا چکے ہیں ۔یہ وہی نوبیل انعام ہے جس کو ڈیڑھ عشرہ قبل اسی طرح دوحصوں میں بانٹ کر جنرل پرویز مشرف اور من موہن سنگھ کو پیش کیا جانا تھا مگر لب بام پہنچنے سے دوچار ہاتھ کی دوری پر کمند ٹوٹ جانے سے یہ منصوبہ ناکام ہوگیا تھا۔