صدارتی انتخاب

صدارتی انتخاب:بلاول بھٹو کی مریم نواز سے ملاقات

ویب ڈیسک:پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے ملک میں ہونے والے صدارتی انتخاب کے حوالے سے وزیراعلیٰ پنجاب مریم نواز سے ملاقات کی اور مشترکہ حکمت عملی پر تبادلہ خیال کیا ۔
چیئرمین پی پی پی بلاول بھٹو زرداری کل ہونے والے صدارتی الیکشن کے حوالے سے حکمت عملی ترتیب دینے کے لیے گورنر ہاس لاہور پہنچے جہاں پاکستان مسلم لیگ(ن)، پاکستان پیپلزپارٹی اور دیگر ارکان کا اجلاس ہوا۔
وزیر اعلیٰ پنجاب مریم نواز سے ملاقات کے موقع پر چیئرمین پی پی پی بلاول بھٹو زرداری نے مریم نواز کو عہدہ سنبھالنے پر مبارک باد دی اور ملاقات میں کل ہونے والے صدارتی الیکشن پر مشترکہ حکمت عملی پر تبادلہ خیال کیا گیا۔
وزیراعلی پنجاب مریم نواز نے بلاول بھٹو زرداری سے صدارتی ا نتخاب میں ووٹرز کی تعداد کے بارے میں بات چیت کی۔
چیئرمین پی پی پی بلاول بھٹو زرداری نے پنجاب اسمبلی میں رکن پی پی پی علی حیدر گیلانی سمیت پارٹی کے دیگر ارکان اسمبلی سے بھی ملاقات کی۔
بعد ازاں مریم نواز اور بلاول بھٹو زرداری نے اراکین پنجاب اسمبلی سے خطاب کیا اور بلاول بھٹو نے کہا کہ آج میں یہاں آپ سب اراکین پنجاب اسمبلی کے پاس اپنے والد کے لیے ووٹ مانگنے آیا ہوں، اپنے والد کے بارے میں اتنا کہہ سکتا ہوں کہ وہ آپ لوگوں کا ایسے ہی خیال رکھے گا جیسے میرا خیال رکھتے ہیں۔
ان کا کہنا تھا کہ آصف زرداری پیپلزپارٹی اور مسلم لیگ(ن)کے مشترکہ امیدوار ہیں، چاروں صوبوں کے اور اپنے منتخب اراکین قومی و صوبائی اور سینیٹ کے اراکین کا خیال رکھیں گے، پاکستان اس وقت جس بحران سے گزر رہا ہے، اس سے نکل کر مفاہمت کی طرف جانا ہے تو صدر کا منصب وفاق کی علامت ہے۔
بلاول بھٹو نے وزیراعلی ٰمریم نواز کو مخاطب کرکے کہا کہ آپ نے یہ منصب سنبھال کر تاریخ رقم کی ہے اور اس صوبے کی سب سے پہلی خاتون وزیراعلیٰ منتخب ہوئی ہیں، یہ پورے پاکستان کے لیے ایک پیغام ہے، پورے پنجاب میں موجود تمام خواتین آپ کی طرف دیکھ رہی ہیں۔
مریم نواز نے کہا کہ بلاول نے کہا کہ ووٹ مانگنے آیا ہوں، اگر آپ ووٹ مانگنے نہ بھی آتے تو مسلم لیگ(ن)اسی طرح آپ کو ووٹ دیتی، آصف علی زرداری صدر پاکستان کے لیے ہمارے امیدوار ہیں، ہم سب ان کو ووٹ دیں گے، یہ فیصلہ ہماری جماعت اور اتحادی حکومت کا ہے۔
وزیراعلیٰ پنجاب نے کہا کہ خوش آئند بات یہ ہے کہ ایک سیاسی شخصیت صدر کی کرسی پر بیٹھے گی، جن کا سیاسی جماعت سے بالاتر ہو کر ملنا جلنا ہے، جو چیلنجز اور سیاسی اتار چڑھا کو سمجھتے ہیں۔

مزید پڑھیں:  اقوام متحدہ نے غزہ کو مقتل گاہ قرار دیا ،اسرائیلی کارروائیوں پر تشویش