125 استعفے

قبول کرنے ہیں تو 125 استعفے ایک ساتھ منظور کریں، شاہ محمود قریشی

پاکستان تحریک انصاف کے وائس چیئرمین شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ حکومت کے ہاتھ پاؤں پھول چکے اور ٹانگیں کانپ رہی ہیں اسی لیے الیکشن کمیشن کے ساتھ مل کر ہمارے 35 ممبران کو ڈی نوٹی فائی کیا گیا، استفے قبول کرنے ہیں تو 125 استعفے ایک ساتھ منظور کریں۔
ویب ڈیسک: تفصیلات کے مطابق زمان پارک میں عمران خان کی زیر صدارت پی ٹی آئی کے اجلاس کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے شاہ محمود قریشی نے کہا کہ شہباز شریف کو بچانے کیلئے استعفوں میں سلیکشن کی گئی، موجودہ اپوزیشن لیڈر ان کے ہاتھ کی گھڑی ہیں، ہم نےفیصلہ کیا ہے سپیکر کو درخواست دے کر اپنا اپوزیشن لیڈر نامزد کرائیں گے، لیڈرآف اپوزیشن ہمارا بنتا ہے تو چیئرمین پبلک اکاؤنٹس کمیٹی بھی وہی ہونا چاہیے۔
شاہ محمود نے کہا کہ استعفے قبول کرنے ہیں تو 125 استعفے پڑے ہیں تمام قبول کریں، یہ سلیکشن بدنیتی پر مبنی ہوگی، یہ نظام کے ساتھ کھیلا جارہا ہے، 35استعفوں کی منظوری سے متعلق لائحہ عمل پر مشاورت کریں گے، عدالت نے بھی ایک طریقہ کار کا تعین کیا تھا، اسپیکر نے بھی کہا کہ وہ عدالتی طریقہ کار کے پابند ہیں۔
انہوں نے کہا کہ ہمارے استعفوں پر اعتراض لگایا گیاتھا کہ ہاتھ سے لکھے ہوئے نہیں، الیکشن کمیشن کا غیرجانبدارانہ معیار بتدریج کم ہو رہا ہے، استعفے قبول کرنے ہیں تو سب قبول کریں سلیکشن بدنیتی ہے۔

مزید دیکھیں :   مردان، مانسہرہ، پبی،باڑہ اور رستم میں6 افراد قتل،3 زخمی